Secretary-General’s remarks at International Conference on 40 Years of Hosting Afghan Refugees in Pakistan, 17 February 2020

A NEW PARTNERSHIP FOR SOLIDARITY

As-salam alaikum.

We come together to recognize a remarkable story of solidarity and compassion.

It is important to do so for many reasons, not least because it is a story that is sorely lacking in much of our world today.

For forty years, the people of Afghanistan have faced successive crises.

For forty years, the people of Pakistan have responded with solidarity.

That generosity now spans across decades and generations.

This is the world’s largest protracted refugee situation in recorded history.

This is also a story that is close to my heart.

In my previous life as UN High Commissioner for Refugees, Pakistan was a familiar destination.

During most of my period as High Commissioner, Pakistan was the number one refugee-hosting country on earth.

For more than three out of every four years since 1979, either Pakistan or Iran have ranked as the world’s top refugee hosting country.

Even though major conflicts have since unfortunately erupted in other parts of the globe and the refugee population has soared, Pakistan today is still the world’s second largest refugee-hosting country.

On every visit here, I have been struck by extraordinary resilience, exceptional generosity and overwhelming compassion.

I saw solidarity not just in words – but in deeds.

This generous spirit is fully in line with what I regard as the most beautiful prescription for refugee protection in world history.  It is found in the Surah Al-Tawbah of the Holy Quran:

“And if anyone seeks your protection, then grant him protection so that he can hear the words of God.  Then escort him where he can be secure.”

This protection should be accorded to believers and non-believers alike in a remarkable example of tolerance many centuries ago before the 1951 Refugee Convention that defines in a modern concept the refugees and the protection they deserve.

I saw that compassion play out in real time here in Pakistan.

And it was grounded in vision.

We have seen many innovative policies take root here:  biometric registration, access to the national education system, health care and inclusion in the economy.

Despite Pakistan’s own challenges, these initiatives have made a big difference.

Indeed, many have been recognized as a global model of good practice.

Some of those progressive policies have inspired elements of the Global Compact on Refugees.

We have been proud to work with you to support Pakistani host communities and Afghan refugees.  We have done so through integrated humanitarian and development actions across the country – alleviating the burden on Pakistan’s national public service system and helping Afghans sustainably reintegrate back home.

But we must recognize that international support for Pakistan has been minimal compared to your own national efforts.

As we look to the challenges ahead, the global community must step up.

On the one hand, we mark 40 unbroken years of solidarity.

But we also despair at 40 broken years of hostility.

The Afghan conflict drags on and on – and we see the deep impact of the protracted nature of conflict, poverty and forced displacement.

We know the solution lies in Afghanistan.

I hope the signals of a possible pathway for peace will lead to a better future for the people of Afghanistan.

I see with us Ambassador Khalilzad.  And I want to strongly encourage to pursue the way of peace.  And you can count, and the Afghan people can count, on the United Nations to support the efforts for peace.

We don’t seek any protagonism.  We are here only to serve the Afghan people [who] need and deserve, finally, peace and prosperity in full respect of their human rights.

I want to reaffirm that the preferred durable solution for refugees has always been voluntary repatriation in safety and dignity to their country of origin.  This is also true for Afghan refugees.

Our efforts on return and reintegration – led in large measure by UNHCR – are aligned with the Afghanistan National Peace and Development Framework.

We are working together on a region-specific Support Platform to assist voluntary repatriation and sustainable reintegration of refugees in Afghanistan, while providing help to refugees and their host communities in both Pakistan and Iran.

Our aim is to galvanize more resources and more investments, widen the circle of partners and forge stronger linkages between humanitarian, development and peace investments.

Youth empowerment must be a special focus.

We need a renewed commitment. We need to make sure that there is not only a strong movement for peace but that peace leads to effective reconstruction, creating the conditions for a successful return and reintegration of Afghan refugees.

Working towards solutions for the Afghan people is not just a sign of solidarity; it is in the world’s best interest.

Afghans now constitute the largest group of arrivals in Europe, exceeding for the first time the arrivals from Syria.

Returns to Afghanistan, as we have said, have hit a historical low.

Afghanistan and its people cannot be abandoned.

Now is the time for the international community to act and deliver.

Our ability to succeed will be a litmus test for the Global Compact on Refugees – its promise of greater responsibility-sharing with countries that have shouldered the burden until now.

Peace efforts leading to intra-Afghan negotiations will pave the way, but sustainable peace and security hinges on better integrating our work on humanitarian, development and peace efforts.

Done right, this work can be a model for the rest of the world.

We must be realistic.  We know big challenges lie ahead.

But the message of this conference – and the presence of so many senior Government officials from all over the world – is a testament of hope and commitment to a new partnership for solidarity and a better future for the people of Afghanistan and Pakistan and for the world.

Shukriya.

اقوام متحدہ

سیکریٹری جنرل

پاکستان میں افغان مہاجرین کی میزبانی کے چالیس سال مکمل ہونے پر منعقدہ

بین الاقوامی کانفرنس کے اعلیٰ سطحی اجلاس میں تاَثرات:

یکجہتی کے لیے ایک نئی شراکت داری

پاکستان، 17 فروری، 2020ء

جناب وزیر اعظم، محترم وزرا، معزز حاضرین، خواتین اور حضرات، السلام علیکم!

ہم یکجہتی اور ہمدردی کی ایک حیرت انگیز داستان کا اعتراف کرنے کے لیے اکٹھے ہوئے ہیں ۔ ایسا کرنا بہت سی وجوہات کے باعث ضروری ہے، نہ کہ صرف اس لیے کہ یہ ایک ایسی داستان ہے جو ہماری دنیا میں کم ہی دکھائی دیتی ہے ۔ چالیس سال سے افغان عوام کو یکے بعد دیگرے بحرانوں کا سامنا کرنا پڑا ہے، اور چالیس سال سے ہی پاکستانی عوام ان سے اظہار یکجہتی کررہے ہیں ۔ یہ فراخ دلی اب دہائیوں اور نسلوں تک پہنچ چکی ہے ۔ معلوم شدہ تاریخ میں یہ دنیا کی سب سے طویل عرصے کو محیط ہجرت کی صورتحال ہے ۔ یہ ایک ایسی داستان بھی ہے جو میرے دل کے قریب ہے ۔ میری سابقہ زندگی میں اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین کے طور پر پاکستان میرے لیے ایک جانی پہچانی منزل تھا ۔ بطور ہائی کمشنر میرے دور میں ، پاکستان دنیا میں مہاجرین کی میزبانی کرنے والے ممالک میں سر فہرست تھا ۔ 1979ء کے بعد سے ہر چار سال میں سے تین سے زائد بار، پاکستان یا ایران دنیا میں مہاجرین کی میزبانی کرنے والے ممالک میں سب سے آگے تھے ۔

اگرچہ اس کے بعد بدقسمتی سے دنیا کے دیگر حصوں میں بڑے تنازعات پھوٹ پڑے اور مہاجرین کی آبادی بڑھ گئی، لیکن آج بھی پاکستان مہاجرین کی میزبانی کرنے والا دنیا کا دوسرا سب سے بڑا ملک ہے ۔ ہر دورے پر یہاں مجھے حیرت انگیز صلاحیت، غیر معمولی فراخ دلی اور بے حد ہمدردی دکھائی دی ۔ یہاں میں نے یکجہتی صرف الفاظ ہی نہیں بلکہ عمل میں بھی دیکھی ۔ یہ فراخ دلی مکمل طور پر اس عمل کے مطابق ہے جسے میں عالمی تاریخ میں مہاجرین کے تحفظ کا سب سے خوبصورت حل سمجھتا ہوں ۔ یہ حل قرآن پاک کی سور ۃ التوبہ میں بھی ملتا ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ ’’اور اگر کوئی تم سے پناہ مانگے تو اسے تحفظ دو تاکہ وہ خدا کا کلام سن سکے ۔ پھر اسے وہاں لے جاوَ جہاں وہ محفوظ ہوسکے ۔ ‘‘

برداشت کی ایک حیرت انگیز مثال پیش کرتے ہوئے مسلمانوں اور غیرمسلموں کو یکساں طور پر دیا جانے والا یہ تحفظ 1951ء کے اس مہاجر کنونشن سے کئی صدیاں پہلے دیا گیا تھا جس میں وضاحت کی گئی کہ مہاجرین کون ہیں اور وہ کس تحفظ کے مستحق ہیں ۔ میں نے پاکستان میں اس ہمدردی کو حقیقی زندگی میں دیکھا ۔ اور یہ آنکھوں میں بس گئی ۔ ہم نے یہاں بہت سی جدید پالیسیوں کی بنیاد پڑتے دیکھی جن میں بائیو میٹرک رجسٹریشن، قومی نظام تعلیم تک رسائی، طبی سہولیات کی فراہمی اور معیشت میں شمولیت شامل ہیں ۔ پاکستان کے اپنے مسائل کے باوجود، ان اقدامات نے بہت فرق پیدا کیا ۔ ان میں سے کئی اقدامات اچھے رواج کے عالمی نمونے کے طور پر تسلیم کیے گئے ۔ ان میں سے کچھ ترقی پسند پالیسیاں عالمی معاہدہ برائے مہاجرین کی بعض شقوں کے لیے بنیاد بھی بنیں ۔

پاکستانی میزبان گروہوں اور افغان مہاجرین کی مدد کے لیے آپ کے ساتھ کام کرتے ہوئے ہمیں فخر محسوس ہوتا ہے ۔ ہم نے یہ کام پورے ملک میں مربوط انسان دوست اور ترقیاتی اقدامات کے ذریعے کیا ، جس سے پاکستان کے قومی عوامی خدمت کے نظام پر بوجھ کو کم کیا گیا اور افغان مہاجرین کو اپنے وطن میں پائیدار طور پر واپسی میں مدد دی گئی ۔ لیکن ہمیں یہ تسلیم کرنا ہوگا کہ آپ کی اپنی قومی کاوشوں کے مقابلے میں پاکستان کو دی گئی بین الاقوامی حمایت بہت کم رہی ہے ۔ اور جبکہ ہم مسائل کی طرف دیکھتے ہیں تو عالمی برادری کو آگے بڑھنا چاہیے ۔ ایک طرف، ہم مسلسل یکجہتی کے 40 سال مکمل کررہے ہیں ۔ لیکن ہم عداوت کے 40 شکستہ برسوں پر مایوس بھی ہیں ۔ افغان تنازعہ چلتا ہی چلا جارہا ہے اور ہم تنازعے، غربت اور جبری بے گھر ہونے کے گہرے اثرات دیکھ رہے ہیں ۔ ہم جانتے ہیں کہ اس کا حل افغانستان میں ہی موجود ہے ۔ مجھے امید ہے کہ امن کے ممکنہ راستے افغان عوام کو بہتر مستقبل کی طرف لے کر جائیں گے ۔

میں دیکھ رہا ہوں کہ امریکہ کے خصوصی ایلچی برائے افغان مفاہمت زلمے خلیل زاد ہمارے ساتھ موجود ہیں ۔ اور میں امن کی راہ پر گامزن ہونے کی بھر پور حوصلہ افزائی کرنا چاہتا ہوں ۔ اور آپ اور افغان عوام امن کوششوں کی حمایت کے لیے اقوام متحدہ سے اعتماد کرسکتے ہیں ۔ ہم یہ نہیں چاہتے کہ ہمیں مرکزی کردار سمجھ کر اہمیت دی جائے ۔ ہم صرف افغان عوام کی خدمت کرنا چاہتے ہیں جو اپنے انسانی حقوق کے مکمل احترام میں امن اور خوشحالی کے مستحق ہیں ۔

میں دوبارہ اس بات کی تصدیق کرنا چاہتا ہوں کہ مہاجرین کے لیے ترجیحی پائیدار حل سلامتی اور وقار کے ساتھ اپنے وطن میں رضاکارانہ طور پر واپس جانا ہی ہے ۔ یہی بات افغان مہاجرین کے لیے بھی ہے ۔ افغان مہاجرین کی واپسی اور انضمام کے سلسلے میں ہماری کوششیں ، جو بڑے پیمانے پر یو این ایچ سی آر کے ذریعے کی گئی ہیں ، افغانستان کے قومی امن اور ترقی کے عملی خاکے سے جڑی ہوئی ہیں ۔ ہم پاکستان اور ایران میں موجود مہاجرین اور ان کے میزبان گروہوں کو مدد فراہم کرتے ہوئے مہاجرین کی افغانستان میں رضاکارانہ وطن واپسی اور پائیدار بحالی میں مدد دینے کے لیے علاقائی سپورٹ پلیٹ فارم پر مل کر کام کر رہے ہیں ۔ ہمارا مقصد زیادہ وسائل اور سرمایہ کاری کو متحرک کرنا، شراکت داروں کے دائرے کو وسیع کرنا اور انسان دوست، ترقیاتی اور امن کی سرمایہ کاری کے مابین مضبوط روابط استوار کرنا ہے ۔

نوجوانوں کو با اختیار بنانے پر خصوصی توجہ دینی ہوگی ۔ ہمیں ایک نئے عزم کی ضرورت ہے ۔ افغان عوام کے مسائل کے حل کے لیے کوشش کرنا صرف یکجہتی کی علامت ہی نہیں بلکہ یہ دنیا کے بہترین مفاد میں ہے ۔ افغان باشندے اب یورپ میں آنے والا سب سے بڑا گروہ ہیں ، اور پہلی بار ان کی تعداد شامی باشندوں سے بڑھ گئی ہے جبکہ افغانستان واپسی تاریخ کی کم ترین سطح پر آگئی ہے ۔ افغانستان اور اس کے عوام کو چھوڑا نہیں جاسکتا ۔ اب وقت آگیا ہے کہ عالمی برادری آگے بڑھ کر کام کرے ۔ کامیابی کی ہماری صلاحیت عالمی معاہدہ برائے مہاجرین سے متعلق ہمارے لیے امتحان ہوگی – جس میں وعدہ کیا گیا ہے کہ اپنے کندھوں پر مہاجرین کا بوجھ اٹھانے والے ممالک کے ساتھ مل کر زیادہ سے زیادہ ذمہ داری میں شریک ہوا جائے گا ۔ باہمی افغان مذاکرات کی طرف لے جانے والی امن کوششیں راستہ ہموار کریں گی، لیکن پائیدار امن اور سلامتی ہماری انسان دوست، ترقیاتی اور امن کی کوششوں سے متعلق ہمارے کام کو بہتر طور پر ہم آہنگ کرنے پر منحصر ہیں ۔ اگر یہ کام ٹھیک سے کرلیا گیا تو یہ باقی دنیا کے لیے نمونہ ثابت ہوسکتا ہے ۔ ہمیں حقیقت پسند بننا چاہیے کیونکہ ہمیں بڑے چیلنجوں کا سامنا ہے ۔ لیکن اس کانفرنس ، اور پوری دنیا کے بہت سے اعلیٰ سرکاری عہدیداروں کی یہاں موجودگی، کا پیغام یکجہتی کے لیے ایک نئی شراکت داری، اور افغانستان، پاکستان اور ہماری دنیا کے عوام کے بہتر مستقبل کے لیے امید اور وابستگی کا منشور ہے ۔ شکریہ