UN Secretary-General’s remarks at Pakistan’s Centre for International Peace and Stability

FUTURE CHALLENGES TO GLOBAL PEACE: THE ROLE OF THE UNITED NATIONS VIS-À-VIS A4P

Islamabad, Pakistan, 17 February 2020
[as delivered]

RectorDear Members of the Faculty, Dear students, Excellencies, Ladies and Gentlemen,

I would like to ask you to join me in paying tribute to the heroic 157 Pakistani peacekeepers that sacrificed their lives to protect the lives of some of the most vulnerable populations in the world. So, I would ask you please to join me in a moment of silence.

Thank you. I am very proud to be a colleague of theirs.

It is a great pleasure and an honour for me to be here in the Centre for International Peace and Stability, one of the most important institutions in the world that support peacekeeping activities in an extremely competent and professional way.

We all know that peace does not happen by chance. It is the result of difficult decisions based on solid evidence and facts. The Centre for International Peace and Stability, and institutions like it, are improving our knowledge and understanding of threats to peace and sources of instability.  You are doing important work in the service of peace.

I myself graduated in engineering, and when I see the facilities and opportunities available to today’s students, I sometimes wish I could go back to college.

I know the students of the National University of Sciences and Technology are making the most of your education by aligning your academic studies with the broader goals of sustainable and inclusive development, equal opportunities, environmental protection and social progress.

Science and technology are an excellent starting point for changing the world, and I wish you all the best in your efforts.

Excellencies, dear students,

Pakistan is one of our most consistent and reliable contributors to peace efforts around the world.

Since the first Pakistani deployment to the Congo – as it was referred – in 1960, Pakistan has contributed more than 150,000 personnel to 41 peacekeeping missions in 23 countries.

And as I mentioned, 157 Pakistani military, police and civilian personnel have paid the ultimate price while serving under the United Nations flag. We will never forget their sacrifice.

Today, Pakistan is the sixth largest contributor of troops and police, with more than 4,000 uniformed personnel serving in nine United Nations peace operations, including in some of our most dangerous missions, like in the Central African Republic and Mali.  Pakistani officers are also playing an important part as Force Commanders and Chiefs of Staff, and Pakistan contributes critical equipment, including a helicopter unit in Mali.

I have seen for myself the professionalism, the commitment of Pakistani military, police and civilian personnel in our missions and I thank you for your important contribution to creating a safer and more peaceful world.

United Nations peacekeeping is a beacon of hope for millions of people affected by conflict and instability.

Since 1948, over 70 UN peacekeeping missions have supported countries to make the transition to peace, fostering an environment of stability and development.

But as the nature of conflict changes, UN peacekeeping faces new challenges: rising threats to the security of peacekeepers themselves; difficult relations in several cases with the governments of some host countries; and problems in identifying an end-point and an exit strategy for our missions.

The growth of well-armed non-state armed groups, some of which operate across borders with shifting alliances and no clear political goals, has made it more difficult to negotiate an end to conflict.

The pathways to peace often depend on finding or creating unity of purpose and political will, at the local, national and international levels.

In some places, Blue Helmets are targeted by armed groups. That means we have to expend some of our resources on our own protection.

New digital technologies and the spread of propaganda on social media platforms are changing the face of war. Our peacekeepers in the Democratic Republic of the Congo and Mali have both been targeted by misinformation campaigns.

These new challenges called for decisive and cohesive action by all peacekeeping partners.

Excellencies and dear students,

This is the background to the Action for Peacekeeping initiative, that was launched in March 2018 to revitalize the essential partnership between the United Nations, troop-and-police contributor countries, Host Governments, regional organizations and all who have a stake in peacekeeping.

Pakistan was the first country to endorse the Declaration of Shared Commitments on A4P. I thank the Government of Pakistan for stepping forward to champion safety and security, performance and accountability.

Over the past two years, more than 150 Member States and four partnering organizations have followed Pakistan’s lead.

The Declaration covers eight areas for peacekeeping: political solutions; Women, Peace and Security; protection; safety and security; performance and accountability; sustaining peace; partnerships; and conduct.

It is a blueprint for all our peacekeeping-related work.

The success of A4P depends on all peacekeeping stakeholders upholding their commitments.

We in the United Nations Secretariat have made progress across key areas of the Declaration, including measures to reinforce the security and performance of our peacekeepers. These have resulted in improved casualty evacuation procedures and a decline in peacekeeper fatalities from malicious acts, from 59 in 2017 to 28 in 2019.

It is important to underline that this reduction in casualties is not the result of diminishment of activities, or a more protective behaviour, on the contrary, it is the result of more proactive action of our peacekeepers. It is the fact that they are being much more proactive and based on that more able to intimidate those that would eventually attack them, that it was possible to meaningfully reduce the number of casualties in our peacekeeping operations and at the same time increment the capacity for the protection of civilians by the peacekeepers themselves.

In Central African Republic, where more than 1,000 Pakistani troops serve, an enhanced partnership with the African Union contributed to a peace agreement between the government and armed groups, which is now being implemented. Levels of violence and civilian casualties have fallen.

With the deployment of the first-ever Pakistani Female Engagement Team to South Kivu in the Democratic Republic of the Congo, Pakistan is a leader in championing women peacekeepers and an example for other troop contributors.

This inspiring all-women Pakistani team has implemented successful projects on vocational training, medical outreach and psychological support, and improved information-gathering that feeds into security assessments. It is my experience, with ten years as High Commissioner for Refugees, being in some of the most dangerous areas in the world, that to gain the confidence of populations, to gain the confidence of communities, women peacekeepers – both military and police – are absolutely essential, and they can do things that us, men, are not able to do – gain the confidence and create conditions for more effective action of our peacekeeping units.

Looking forward, we see several areas for progress within the A4P framework.

First, supporting missions in the most challenging environments to deal with greater security risks than ever.

Second, we are building greater capacity to improve the protection of civilians through training partnerships and provision of better equipment.

Third, we will enhance our analytical and intelligence capacities, by strengthening direct engagement with the host governments, communities and local people.

Fourth, we will strengthen implementation of the Human Rights Due Diligence policy, including through review mechanisms.

We will continue to work with troop and police-contributing countries to increase the number of women in uniform; to fill equipment gaps; and to set standards for environmental sustainability and accountability.

And we will build on our efforts to hold accountable the small minority of peacekeepers who commit unlawful acts, including sexual exploitation and abuse.

I remember the first meeting I had with the Ambassadors of troop contributing countries when I started my functions.  It is true that three years ago, there was a campaign that was negative and question was very much in the limelight of the international Media. I am very proud of the fact it was possible to completely change that perception and today when we read the media on peacekeeping it is a totally different and a much more positive image that we are able to collect. I am extremely grateful to all countries that assumed leadership in order to have better training, better trainers and better accountability of their forces. This has contributed enormously to strengthen the image of peacekeeping around the world, and Pakistan has been absolutely exemplar in that regard.

We are planning to create a framework, together with our troop and police-contributing partners, to systematize performance evaluation and accountability.

Excellencies, dear students,

Pakistan’s great founder, Mohammad Ali Jinnah, said the aim of the state should be: “Peace within and peace without”.

United Nations peacekeeping is based on the same principle.

Peace in one place helps to build peace everywhere.

I thank you once again for your important contribution.

And I look forward to discussing all these issues with you. Thank you very much.

اقوام متحدہ

سیکریٹری جنرل

عالمی امن کو درپیش مستقبل کے خطرات پر تاثرات:

اے فار پی کی بابت اقوام متحدہ کا کردار

اسلام آباد، پاکستان، 17 فروری، 2020ء

ریکٹر، محترم اساتذہَ کرام، عزیز طلبا و طالبات، معزز حاضرین، خواتین و حضرات!

میں چاہتا ہوں کہ آپ میرے ساتھ مل کر امن اہلکاروں کے طور پر کام کرنے والے ان 157 پاکستانی ہیروز کو خراجِ عقیدت پیش کریں جنھوں نے دنیا کے بعض کمزور ترین طبقات کی حفاظت کرتے ہوئے اپنی جانوں کی قربانی دی ۔ لہٰذا، میں چاہوں گا کہ میرے ساتھ مل کر آپ کچھ دیر کے لیے خاموشی اختیار کریں ۔

آپ کا شکریہ! مجھے فخر ہے کہ میں ان ہیروز کے ساتھ کام کرتا تھا ۔ یہ میرے لیے بہت زیادہ خوشی اور اعزاز کی بات ہے کہ میں سنٹر فار انٹرنیشنل پِیس اینڈ سٹیبیلیٹی میں آیا ہوں جو انتہائی ماہرانہ اور پیشہ ورانہ انداز میں قیام امن کی کارروائی کو اعانت فراہم کرنے کے لیے دنیا کے اہم ترین اداروں میں سے ایک ہے ۔ ہم سب اچھی طرح جانتے ہیں کہ امن اتفاقاً قائم نہیں ہوتا ۔ یہ ٹھوس ثبوتوں اور حقائق پر مبنی مشکل فیصلوں کا نتیجہ ہوتا ہے ۔ سنٹر فار انٹرنیشنل پِیس اینڈ سٹیبیلیٹی، اور اس جیسے ادارے، امن کو لاحق خطرات اور عدم استحکام کے اسباب سے متعلق ہمارے علم اور بصیرت کو بہتر بنارہے ہیں ۔

میں نے انجینئرنگ میں گریجوایشن کی تھی، اور جب میں آج کے طلبہ کو میسر سہولیات اور مواقع کی طرف دیکھتا ہوں تو میرا کبھی کبھار دل چاہتا ہے کہ میں دوبارہ کالج میں داخلہ لے لوں ۔ میں جانتا ہوں کہ نیشنل یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے طلبہ اپنے تعلیمی معاملات کو پائیدار اور مجموعی ترقی کے وسیع تر مقاصد، مساوی مواقع، ماحولیاتی تحفظ اور معاشرتی نشوونما سے جوڑ کر اپنی تعلیم سے بھرپور فائدہ اٹھا رہے ہیں ۔ دنیا کو بدلنے کے لیے سائنس اور ٹیکنالوجی ایک عمدہ نقطۂ آغاز ہیں ، اور میں آپ کی کاوشوں کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں ۔

معزز حاضرین، عزیز طلبہ،

پاکستان پوری دنیا میں امن کاوشوں کے حوالے سے ہمارے سب سے ثابت قدم اور باعتماد شراکت داروں میں سے ایک ہے ۔ جیسے بتایا گیا ہے کہ 1960ء میں پاکستان کی کانگو میں پہلی تعیناتی سے اب تک پاکستان 23 ممالک میں 41 امن مشنز کے لیے 150,000 اہلکار بھیج چکا ہے ۔ اور جیسے ابھی ذکر کیا گیا کہ پاکستان کے 157 فوجی، پولیس اور سول اہلکار اقوام متحدہ کے پرچم تلے کام کرتے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرچکے ہیں ۔ ہم ان کی قربانی کبھی نہیں بھولیں گے ۔ آج، پاکستان وسطی افریقی جمہوریہ اور مالی جیسے ہمارے بعض مشکل ترین مشنز سمیت اقوام متحدہ کی نو امن کارروائیوں میں 4,000 سے زائد باوردی اہلکاروں کے ساتھ سپاہی اور پولیس بھیجنے والا چھٹا سب سے بڑا حصہ دار ہے ۔ پاکستانی افسران فورس کمانڈرز اور چیفس آف سٹاف کے طور پر اہم کردار ادا کررہے ہیں ، اور پاکستان مالی میں ایک ہیلی کاپٹر یونٹ سمیت اہم ساز و سامان بھی مہیا کررہا ہے ۔ میں خود ان مشنز میں پاکستانی فوج، پولیس اور سول اہلکاروں کی پیشہ ورانہ مہارت اور احساس ذمہ داری دیکھ چکا ہوں اور میں ایک محفوظ تر اور زیادہ پُر امن دنیا کی تعمیر میں آپ کے اہم کردار پر آپ کا ممنون ہوں ۔ تنازعے اور عدم استحکام سے متاثر کروڑوں لوگوں کے لیے اقوام متحدہ کا قیام امن پروگرام امید کا چراغ ہے ۔

ء1948 سے اب تک 70 سے زائد یو این قیام امن مشنز استحکام اور ترقی کے ماحول کو فروغ دیتے ہوئے بہت سے ممالک کو امن کی جانب بڑھنے میں معاونت دے چکے ہیں ۔ لیکن تنازعے کی نوعیت بدلنے کے ساتھ اقوام متحدہ قیام امن کو نئے چیلنجوں کا سامنا ہے جن میں امن اہلکاروں کی حفاظت کے لیے بڑھتے ہوئے خطرات، بعض میزبان ممالک کی حکومتوں کے ساتھ دشوار تعلقات، اور ہمارے مشنز کے لیے نقطۂ اختتام اور ان سے نکلنے کے لیے حکمت عملی کا تعین شامل ہیں ۔ غیر ریاستی مسلح گروہوں ، جن میں سے کچھ سرحدوں کے آر پار اتحاد بدل بدل کر کارروائیاں کرتے ہیں اور ان کے کوئی واضح سیاسی مقاصد نہیں ہیں ، کی افزائش نے تنازعے کے خاتمے کو اور زیادہ مشکل بنا دیا ہے ۔ امن کے لیے راستوں کا انحصار اکثر مقامی، قومی اور بین الاقوامی سطحوں پر مقصد کے اشتراک اور سیاسی قوتِ ارادی کی تلاش یا تعمیر پر ہوتا ہے ۔ بعض جگہوں پر، مسلح گروہ نیلے ہیلمٹ کو نشانہ بناتے ہیں ۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ہمیں کچھ وسائل اپنی حفاظت پر خرچ کرنا ہوں گے ۔ نئی ڈیجیٹل ٹیکنالوجیز اور سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر پروپیگنڈا کا پھیلاؤ جنگ کی نوعیت کو بدل رہے ہیں ۔ جمہوریہ کانگو اور مالی دونوں میں ہمارے امن اہلکاروں کو غلط معلومات والی مہموں کی بنیاد پر نشانہ بنایا گیا ۔ یہ نئے چیلنج قیام امن کے تمام شراکت داروں سے فیصلہ کن اور مربوط کارروائی کا تقاضا کرتے ہیں ۔

معزز حاضرین، عزیز طلبہ،

یہ عمل برائے قیام امن اقدام، یعنی اے فار پی، کا پس منظر ہے جس کا افتتاح اقوام متحدہ ، سپاہی اور پولیس بھیجنے والے حصہ داروں ، میزبان حکومتوں ، علاقائی تنظیموں اور قیام امن سے تعلق رکھنے والے سب حصہ داروں کی ضروری شراکت داری کو مضبوط بنانے کے لیے میں نے مارچ 2018ء میں کیا ۔ پاکستان وہ پہلا ملک تھا جس نے اے فار پی کے اعلان برائے مشترکہ ذمہ داری کی تائید کی ۔ میں سلامتی اور حفاظت، کارکردگی اور احتساب میں سبقت لے جانے کے لیے قدم آگے بڑھانے پر حکومت ِپاکستان کا شکر گزار ہوں ۔ گزشتہ دو برس میں 150 سے زائد رکن ممالک اور چار شراکت دار تنظیموں نے اس سلسلے میں پاکستان کی پیروی کی ہے ۔ یہ اعلان قیام امن کے 8 حوالوں پر مشتمل ہے، جن میں سیاسی حل؛ خواتین، امن اور حفاظت؛ تحفظ؛ سلامتی اور حفاظت؛ کارکردگی اور احتساب؛ پائیدار امن؛ شراکت داریاں ؛ اور کام کرنے کا طریقہ شامل ہیں ۔ یہ قیام امن سے متعلق ہمارے تمام کاموں کا خاکہ ہے ۔ اے فار پی کی کامیابی کا انحصار قیام امن کے تمام حصہ داروں کے اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے پر ہے ۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹریٹ میں موجود ہم لوگوں نے اپنے امن اہلکاروں کی حفاظت اور کارکردگی کو مضبوط بنانے سمیت اس اعلان کے اہم حوالوں سے متعلق کامیابی حاصل کی ہے ۔ اس سب کے نتیجے میں زخمیوں کو شورش زدہ علاقوں سے نکالنے کے طریقہ کار میں بہتری اور معاندانہ کارروائیوں سے امن اہلکاروں کی ہلاکتوں میں کمی آئی ہے، جو 2017ء میں 59 تھیں اور 2019ء میں کم ہو کر28 رہ گئیں ۔ وسطی افریقی جمہوریہ میں ، جہاں 1,000 سے زائد پاکستان سپاہی خدمات انجام دے رہے ہیں ،افریقی یونین کے ساتھ بہتر شراکت داری نے حکومت اور مسلح گروہوں کے درمیان امن معاہدے میں کردار ادا کیا، جو اب نافذ کیا جارہا ہے ۔ تشدد اور سول جانی نقصانات میں کمی آئی ہے ۔

جمہوریہ کانگو میں جنوبی کیوو میں پہلی پاکستانی خواتین ٹیم کی تعیناتی سے پاکستان خواتین امن اہلکاروں کے کام میں سبقت لے گیا اور دیگر سپاہی بھیجنے والے ممالک کے لیے ایک مثال بن گیا ہے ۔ صرف خواتین پر مبنی اس متاثر کن پاکستانی ٹیم نے پیشہ ورانہ تربیت، طبی خدمات کی فراہمی اور نفسیاتی امداد کے پراجیکٹس کو کامیابی سے نافذ کیا ہے، اور معلومات کی جمع آوری کو بہتر بنایا ہے جس سے حفاظتی جائزوں میں مدد ملی ہے ۔ دس سال تک بطور ہائی کمشنر برائے مہاجرین کام کرتے ہوئے دنیا کے بعض خطرناک ترین علاقوں میں جا کر یہ بات میرے تجربے میں آئی کہ مقامی آبادی اور گروہوں کا اعتماد حاصل کرنے کے لیے پولیس اور فوجی خواتین امن اہلکاروں کی موجودگی بہت ضروری ہے، اور وہ لوگوں کا اعتماد حاصل کرنے اور قیام امن یونٹس کے زیادہ موَثر انداز میں کام کرنے کے لیے جیسے کام کرسکتی ہیں ، وہ ہم مرد نہیں کرسکتے ۔

مستقبل کی طرف دیکھتے ہوئے ہم اے فار پی کے ڈھانچے کے اندر ہی ترقی کے کئی حوالے دیکھ رہے ہیں ۔ اول، دشوار ترین ماحول میں ماضی سے کہیں زیادہ حفاظتی خدشات سے نمٹنے کے لیے معاون مشنز کی ضرورت ہے ۔ دوم، ہم عام لوگوں کے تحفظ کو بہتر بنانے کے لیے تربیتی شراکت داریوں اور بہتر ساز و سامان کی فراہمی کے ذریعے استعداد کو بہت زیادہ بڑھا رہے ہیں ۔ سوم، ہم میزبان حکومتوں ، گروہوں اور مقامی لوگوں کے ساتھ براہ راست تعاون کو مضبوط بناتے ہوئے اپنی تجزیاتی اور انٹیلی جنس صلاحیتوں میں اضافہ کریں گے ۔ چہارم، ہم نظر ثانی کے نظاموں سمیت انسانی حقوق کی مطلوبہ احتیاط پالیسی کے نفاذ کو مضبوط بنائیں گے ۔ ہم باوردی خواتین کی تعداد بڑھانے، ساز و سامان کے خلا کو پُر کرنے، اور ماحولیاتی استحکام اور احتساب کے معیارات طے کرنے کے لیے سپاہی اور پولیس بھیجنے والے ممالک کے ساتھ کام جاری رکھیں گے ۔ اور ہم امن اہلکاروں کی اس چھوٹی اقلیت کے احتساب کے لیے اپنی کوششیں بڑھائیں گے جو جنسی استحصال اور ناجائز فائدے حاصل کرنے سمیت غیر قانونی کام کرتی ہے ۔

مجھے یاد ہے جب میں نے اپنا عہدہ سنبھالا تو میں نے قیام امن کے لیے سپاہی بھیجنے والے ممالک کے سفیروں سے ملاقات کی تھی ۔ یہ حقیقت ہے کہ تین سال پہلے ایک مہم چل رہی تھی جو منفی تھی اور وہ بین الاقوامی میڈیا میں بہت نمایاں تھی ۔ مجھے فخر ہے کہ اس تاَثر کو پوری طرح بدلنا ممکن ہوا اور آج ہم میڈیا میں قیام امن کے حوالے سے جو کچھ دیکھتے ہیں وہ بالکل مختلف ہے اور ہم مزید مثبت امیج حاصل کرنے کے قابل ہیں ۔ میں ان تمام ممالک کا بہت زیادہ ممنون ہوں جنھوں نے بہتر تربیت، بہتر تربیت کاروں اور اپنی افواج کے بہتر احتساب کے لیے رہنما کردار ادا کیا ۔ اس سے دنیا بھر میں قیام امن کا امیج بہت زیادہ مضبوط ہوا ہے، اور پاکستان اس سلسلے میں ایک اچھی مثال ہے ۔ کارکردگی کے جائزے اور احتساب کو منظم بنانے کے لیے ہم اپنے سپاہی اور پولیس بھیجنے والے شراکت داروں کے ساتھ مل کر ایک عملی خاکہ بنانے کی منصوبہ بندی کررہے ہیں ۔

معزز حاضرین، عزیز طلبہ،

پاکستان کے عظیم بانی محمد علی جناح نے کہا تھا کہ ریاست کا عزم ’اندرونی امن اور بیرونی امن‘ ہونا چاہیے ۔ اقوام متحدہ قیام امن اسی اصول پر مبنی ہے ۔ ایک جگہ امن کا قیام ہر جگہ امن کے قیام میں مدد دیتا ہے ۔ میں آپ کی اہم شراکت داری کے لیے ایک بار پھر آپ کا شکریہ ادا کرتا ہوں ۔ اور میں آپ سے ان تمام معاملات پر بات کرنے کی توقع کرتا ہوں ۔ بہت شکریہ!